• May 27, 2020

:تازہ ترین خبر

اسلام آباد: چوکی پر فائرنگ، دو پولیس اہلکار شہید

امریکی جریدے “فوربز” نے پاک بحریہ کے پاس ایک ایسی پراسرار آبدوز کا انکشاف کیا ہے جس کے بارے میں دنیا میں کوئی نہیں جانتا تھا۔

براہ راست پروگرام میں بندر کا خاتون اینکر پر حملہ اسٹاف کی دوڑیں

کورونا وائرس: ماسک کی کون سی قسم وائرس کو کتنا روک سکتی ہے؟

طیارہ حادثے کا ذمہ دار کون؟پیپلز پارٹی کے رہنما اورسابق وزیر داخلہ نے کھول کھول کر بیان کر دیا

امریکی ریاستوں میں کرونا وائرس سے ہلاک افراد کی تعداد ایک لاکھ تک پہنچ گئی

وزیر اعلیٰ پنجاب نے ایسے علاقے میں ترقیاتی کام کرانے کا اعلان کردیا کہ جان کر آپ کا بھی منہ کھلا کا کھلا رہ جائے

پنجاب لاک ڈاؤن، مارکیٹوں کے اوقات کار تبدیل، پیٹرول پمپس 24 گھنٹے کھلے رہیں‌گے

عمران خان کتنے سال پاکستان کے وزیر اعظم رہیں گے ؟معروف ماہر علم نجوم نے بڑی پیش گوئی کردی ،2یا 5سال کے لئے نہیں بلکہ ۔۔۔

کورونا لاک ڈاؤن ، بھارت میں پھنسے 179 پاکستانی کل وطن واپس پہنچیں گے

عالمی ادارہ صحت کا کورونا وائرس کی بڑھتی وبا پر قابو نہ پانے پر اظہار تشویش

برسلز(ہم صفیر نیوز) چین کے باہر 26 ممالک میں کورونا وائرس کے تصدیق شدہ کیسز کی تعداد 1152 ہو چکی ہے اور مجموعی طور پر 8 افراد ہلاک ہو چکے ہیں۔ غیر ملکی خبررساں ادارے کے مطابق عالمی ادارہ صحت کے سربراہ ڈاکٹر ٹیڈروس ایڈہانوم نے اپنے ایک بیان میں کہا کہ ایران میں کورونا وائرس سے دو نئی ہلاکتوں کی تصدیق کے بعد ایران میں مجموعی طور پر کورونا وائرس سے ہلاک ہونیوالوں کی تعداد 4 ہو گئی ہے۔ ان کا مزید کہنا تھا کہ یہ امکان ہے کہ ایران میں اس وائرس پر قابو پا لیا جائیگا۔ ایرانی محکمہ صحت کے مطابق یہ وائرس ایران میں شاید پہلے سے موجود تھا جبکہ چین میں کورونا وائرس سے متاثرہ افراد کی تعداد 75567 ہو گئی ہے جن میں 2239 ہلاکتیں ہو چکی ہیں۔ چین کے ہوبائی صوبے سے شروع ہونے والا وائرس کو ویڈ 19 سانس کی بیماریوں کا باعث بنتا ہے عالمی ادارہ صحت کے سربراہ ڈاکٹر ٹیڈروس کے مطابق اگرچہ چین سے باہر کورونا وائرس سے متاثر ہونے والوں کی تعداد نسبتاً کم ہے لیکن انفیکشن کی صورت حال تشویشناک ہے انہوں نے مزید کہا کہ تشویش اس بات پر ہے کہ بہت سے کیسز کا براہ راست اس مرض سے کوئی واضح تعلق نظر نہیں آتا۔ لیکن انہوں نے اس بات پر بھی زور دیا کہ چین اور دیگر ممالک کی جانب سے اس مرض کو پھیلنے سے روکنے کے لئے اب بھی مزید اقدامات کئے جا سکتے ہیں۔ انہوں نے ان ملکوں کے نام پیغام میں کہا کہ وہ ممکنہ طور پر وباء کے پھیلاؤ کو روکنے کے لئے مزید وسائل صرف کریں۔ اس معاملے میں ڈاکٹر ٹیڈروس نے عالمی ادارہ صحت کی جانب سے بھرپور معاونت فراہم کرنے کی پیش کش کی ہے اور ڈاکٹر ٹیڈروس کے مطابق ان کا ادارہ ان ممالک کے لئے زیادہ پریشان ہیں جہاں وائرس کے ممکنہ پھیلاؤ کو روکنے کے لئے صحت کا بہتر نظام موجود نہیں ہے۔

Read Previous

حکومت مریم و حمزہ کو باہر بھیجنے پر راضی ہو جائے تو یہ جوتے چھوڑ کر دوڑ لگا دیں گے ،فواد چوہدری

Read Next

اثاثے چھپانے پر پشاور کے 14ہسپتالوں سے ریکارڈ طلب

%d bloggers like this: